حکومت کیلئے بجٹ کو پاس کروانا کوئی مشکل کام نہیں، احمد بلال محبوب

نیوزون کے خصوصی پروگرام “پرائم ٹائم ودتھ ٹی ایم” میں صدر پلڈاٹ احمد بلال محبوب، پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) رہنما یار محمد رند اور پاکستان پیپلز پارٹی کی رہنما شہلا رضا نے شرکت کی اور ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال پر میزبان طارق محمود سے تبادلہ خیال کیا۔

پروگرام میں میزبان سے گفتگو کرتے ہوئے صدر پلڈاٹ احمد بلال محبوب کا کہنا تھا کہ حکومتی اراکین کی غیر حاضری پر بجٹ منظوری میں مشکل ہوگی اور اپوزیشن کی غیر حاضری میں بجٹ منظوری میں آسانی ہوگی۔ صدر وزیراعظم کو کہہ سکتے ہیں کہ اعتماد کو ووٹ ایوان سے لیں اور حکومت کے لیے بجٹ کو منظور کروانا مشکل نہیں ہے۔

احمد بلال محبوب ے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ عددی اکثریت نہ ہونے کی صورت میں اتحادیوں کی ضرورت ہوگی اور بجٹ منظور ہونے سے متعلق کوئی تشویش نظر نہیں آرہی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پارٹی کے لوگ بجٹ کے خلاف ووٹ دیں گے تو سیٹ گنوادیں گے اور پارٹی کے لوگوں کا بجٹ کے حق میں ووٹ دینا لازم ہے۔

میزبان سے گفتگو کرتے ہوئے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) رہنما یار محمد رند کا کہنا تھا کہ سندھ میں ایڈز سے متعدد بچوں کی موت ہوئی ہے اور ماضی لیے قرضوں کا سود ادا کررہے ہیں۔ پی ٹی آئی نے ہمیشہ پاکستان، عوام اور مسائل کی بات کی ہے۔

پی ٹی آئی رہنما سردار یار محمد رند کا مزید کہنا تھا کہ احتساب سب کا ہونا چاہیے اور نواز شریف نے چوری کی تو سزا ملنی چاہیے۔

پروگرام میں میزبان سے گفتگو کرتے ہوئے پاکستان پیپلز پارٹی کی رہنما شہلا رضا کا کہنا تھا کہ پی پی، ن لیگ سیاسی حریف ہیں جبکہ پی پی اور ن لیگ کے اختلافات نظریاتی ہیں۔ دونوں جماعتیں کیسز پر ایک دوسرے کو سپورٹ نہیں کررہی اور پیپلز پارٹی ایک ایجنڈے لے کر آئی ہے۔

شہلا رضا کا کہنا تھا کہ عمران خان نے ملک میں مہنگائی کا پہاڑ کھڑا کردیا ہے اور بجٹ پاس نہیں ہوا اور قیمتیں آسمان پر پہنچ گئیں۔ ن لیگ 5 سال میں 10 بلین ڈالر لیے تھے اور آپ کو زرعی ترقی کرنے سے کس نے روکا تھا؟ آپ نے کارپوریٹ سیکٹر کو دیاغریب کو کچھ نہیں دیا اور پیپلزپارٹی نے کسان کو سبسڈی دی۔

پی پی رہنما شہلا رضا کا کہنا تھا کہ ہمارے دور میں بھی مشکلات، دہشتگردی تھی اور تحریک انصاف کو پرامن ملک ملا ہے۔ ڈی جی خان میں ایڈز کے مریض کی بڑی تعداد ہے اور بلوچستان میں سی پیک کو معمولی رقم دی جارہی ہے۔ مشرف کو 30 بلین ڈالرز ملے تھے، انکا بھی حساب ہونا چاہیے اور پیپلز پارٹی کو بھی خالی خزانہ ملا تھا، ہمیں 23 ماہ کے لیے 7 ارب روپے ملے۔

شہلا رضا کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف کی معاشی ٹیم ناکام ہوچکی ہے اور ہم احتساب کے خلاف نہیں، زرداری کو 11 سال قید ہوئی۔ انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان کہتے ہیں کہ میں کسی کو این آر او نہیں دوں گا اور این آر او نہ دینے والے ایمنسٹی اسکیم کیوں اور کس کے لیے لائے؟

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay