سلیکٹڈ وزیراعظم نےعام آدمی کی زندگی اجیرن کردی، شہباز شریف

اسلام آباد: اپوزیشن لیڈز شہباز شریف کا کہنا ہے کہ سلیکٹڈ وزیراعظم نےعام آدمی کی زندگی اجیرن کردی۔

اپوزیشن لیڈر شہبازشریف اور مولانا فضل الرحمان کے درمیان ہونے والی ملاقات میں ملکی سیاسی صورت حال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

شہباز شریف کا ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ سلیکٹڈ وزیراعظم اور ان کی ٹیم نےعام آدمی کی زندگی اجیرن کردی ہے اور سلیکٹڈ وزیراعظم نے معیشت کو تباہ کردیا ہے۔ ملاقات میں خارجہ پالیسی کے حوالے سے بھی گفتگو ہوئی ہے اور سیاسی اور معاشی صورتحال پر تفصیلی بات چیت ہوئی ہے۔

انکا کہنا تھا کہ جلد آل پارٹیز کانفرنس بلائی جائے گی اور اے پی سی کی تاریخ مشاورت سے طے کی جائے گی۔ اے پی سی میں مشاورت سے فیصلے کیے جائیں گے اور عمران نیازی نے کنٹینر پر عوام کو سبز باغ دکھائے تھے۔

اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کا کہنا تھا کہ عمران نیازی کہتے تھے ملک کو معاشی لحاظ سےجنت بنادیں گے اور 10 ماہ میں عوام کا معاشی قتل کرکے ملک کو جہنم بنا دیا۔ سلیکٹڈ وزیراعظم نےعام آدمی کی زندگی اجیرت کردی اور حکومت نے 10 ماہ میں ظالمانہ اقدامات کیے۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ مہنگائی آسمان پر پہنچ گئی، سرمایہ کار ملک سے بھاگ رہا ہے اور غریب مریضوں کو ادویات نہیں مل رہیں۔ عوام دشمن بجٹ کی بھرپور مخالفت کریں گے۔

پاکستان مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف کا کہنا تھا کہ حکومت کو بجٹ واپس لینے پر مجبور کریں گے اور اپنی زندگی میں اتنا جھوٹا سلیکٹڈ وزیراعظم نہیں دیکھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اپوزیشن جماعت اے پی سی میں متفقہ فیصلہ کریں گی۔

شہباز شریف کے ہمراہ جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ آج کی مشاورت سے مطمئن ہوں اور آج سب کے درمیان فکری ہم آہنگی پائی گئی۔

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ جعلی حکومت، مسلط کردہ حکمران کسی طور پر قابل قبول نہیں اور یہ جعلی حکومت قوم کے قابل نہیں ہے۔حکومتی ارکان اپوزیشن لیڈر کو تقریر کرنے نہیں دے رہے اور حکومت دھکم پیل سے بجٹ منظور کرانا چاہتی ہے۔

انکا کہنا تھا کہ اس وقت حکومت کیلئے بجٹ پاس کرانا ممکن نہیں ہے اور بجٹ سے متعلق پوری قوم کو ایک پیج پر ہونا ہوگا۔ نااہل حکمرانوں سے قوم کونجات دلانا ہوگی اور گرفتار پارلیمنٹرینز کے پروڈکشن آرڈر جاری نہیں کیے جارہے۔

جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ پروڈکشن آرڈر اس لیے جاری نہیں کیے جارہے تاکہ بجٹ میں ووٹ استعمال نہ کرسکیں اور پہلی بار حکومت اپوزیشن کیخلاف احتجاج کررہی ہے یہ ہے تبدیلی۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر کو بات نہیں کرنے دے رہی۔

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay