اپوزیشن تعاون کا کہہ رہی ہے اور حکومت پیچھے ہٹ رہی ہے، قمرزمان کائرہ

نیوزون کے خصوصی پروگرام “پرائم ٹائم ودتھ ٹی ایم” میں پی پی رہنما قمرزمان کائرہ، صدرایف پی سی سی آئی داروخان اچکزئی اور صدرکےسی سی آئی جنیداسماعیل نے شرکت کی اور ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال سمیت اہم معاملات پر میزبان طارق محمود سے تبادلہ خیال کیا۔

قمرزمان کائرہ نے میزبان سے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ الیکشن 2018 میں فارم 45 پولنگ ایجنٹ کونہیں دیاگیا، پولنگ ایجنٹ کو باہر نکال دیا گیا تھا، پیپلزپارٹی نےآئین میں بےشمارترامیم کرائیں، اپوزیشن تعاون کاکہہ رہی ہےاورحکومت پیچھےہٹ رہی ہے، بلاول بھٹو نے پہلے دن سے کہا قدم بڑھاؤہم آپ کےساتھ ہیں۔

قمرزمان کائرہ نے کہا کہ حکومت تصادم کی پالیسی پرگامزن ہے، ایجنسیاں ایم کیوایم کوپاکستان کاقاتل کہتی تھیں، چپڑاسی کو وزیر بنایا جا رہا ہے، بجٹ پربحث کےدوران ممبرپورےنہیں تھے۔

پیپلزپارٹی کے رہنما کا کہنا تھا کہ سیشن کے دوران کمیٹی اجلاس کرایا جاتا ہے، کون بیٹھے گا؟ اپوزیشن کی آوازکو بند کرنے کی کوشش کی جارہی ہے، وزیراعلیٰ کے پی سمیت دیگر و زرا پرکیسز ہیں، کل تک لوٹوں کو گالیاں دینے والے آج لوٹے بنا رہے ہیں، اپوزیشن اکٹھی ہے، کامیابی ضرورملے گی، پارلیمان،عدلیہ،ایجنسیوں کوٹھیک کرنے کی ضرورت ہے۔

قمرزمان کائرہ کا کہنا تھا کہ بجٹ کے بعد پورا ملک سڑکوں پرنکل آیاہے، نیب کااحتساب اورعدالتوں کاانصاف کرنا ہے اور 60 فیصد آبادی دن میں کماتی ہے اور شام کوکھاتی ہے۔

پروگرام میں شامل صدرایف پی سی سی آئی داروخان اچکزئی نے میزبان سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم نے کراچی تاجروں کے نمائندوں کو بلایا، وزیراعظم نے ہمارے خدشات پرکوئی فیصلہ نہیں دیا اور سب نے اپنی اپنی بہت اچھی تجاویزدیں، معاشی ٹیم نے ہمارے خدشات پرمنفی جواب دیا، آج سیریزآف میٹنگ تھی اور ایف پی سی آئی کی ٹیم کو پہلے سیشن میں بلایا گیا۔

داروخان اچکزئی نے کہا کہ وزیراعظم نےکاروباری برادری سے بات چیت کاعندیہ دیا ہے، اسلام آباد میں ایف پی سی آئی کے ساتھ دوبارہ بات چیت ہوگی، وزیراعظم نے کہا ہے ہم کسی حل کی طرف جاناچاہتے ہیں اور وزیراعظم نے کہا ایکسپورٹ کے نام لوکل سیلزٹیکس پرچھوٹ نہیں دیں گے۔ انہوں کہاکہ ہم اس معاملےپرکسی قسم کی رعایت نہیں دیں گے، حکومت لائن اَپ ایکشن کامیاب بناناچاہتی ہےچاہےکتنی گردنیں کٹ جائیں۔

داروخان اچکزئی نے کہا کہ حکومت کومعاملےپرنظرثانی کرنی چاہیے یہ ملک کیلئے بہتر ہے، ہمیں ایسی امیدنہ دی جائے جو آپ نہیں کرسکتے، حکومتی فیصلےعوام کی برداشت سےباہرہیں اور ایک میٹنگ دوبارہ بلائی جائے جس میں فیصلے ہوں، میثاق معیشت کے تحت فیصلے ہوں توملک بحران سے نکل سکیں گے۔

پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے صدر کے سی سی آئی جنیداسماعیل نے کہا کہ اثاثہ جات پرپرپوزل کراچی چیمبرزآف کامرس نےدیا، ہمیں وزیراعظم نے سننے کے لیے بلایاتھا،لوگوں میں اتناخوف ہے کہ اکاؤنٹ میں پیسے جمع نہیں کر رہے، وزیراعظم نے کہا آپ پرخوف کی فضا نہیں رہنے دیں گے۔

صدرکےسی سی آئی جنیداسماعیل نے کہا کہ ہم 17 فیصد سیلز ٹیکس نہیں دے سکتے، حفیظ شیخ نے کہا سی این آئی سی کی شرط کو واپس نہیں لیں گے، ایس آر او ایکسپورٹ کیلئےنکالاگیاتھاامپورٹ کیلئے، انہوں نےکہاکہ لوکل مینوفیکچرنگ پرٹیکس لیں گے، چیمبرمیں وہی آدمی ممبربن سکتاہےجوٹیکس دہندہ ہو جب کہ کچھ چیزیں ایسی ہیں جوناپختہ ہیں۔

جنیداسماعیل نے کہا کہ ہم نے 13 نکاتی پروگرام وزیراعظم کی میزپررکھ دیاہے، جب تک ہم ایک پیج پرنہیں ہوں گےتوکام نہیں کرسکتے،معاشی صورتحال پروزیراعظم نےکہاہم کوملکرساتھ چلناہے، ہمیں کیوں مصیبت میں ڈالاجارہاہے، یہ سب باتیں ہم نے تحریری طور پروزیراعظم کودیں۔

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay