مدارس کے نظام تعلیم کو ایسا بنایا جائے جو کوئی تبدیل نہ کرسکے، مفتی نعیم

نیوزون کے خصوصی پروگرام “پرائم ٹائم ودتھ ٹی ایم” میں دفاعی تجزیہ کاراعجازاعوان، سینئرتجزیہ کارامتیازگل، سینئرتجزیہ کار پی جے میر  اور جامعہ بنوریہ کے مہتمم اور ممتاز عالم دین مفتی نعیم  نے پروگرام میں شرکت کی اور ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال سمیت اہم معاملات پر میزبان طارق محمود سے تبادلہ خیال کیا۔

پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے ممتاز عالم دین مفتی نعیم  نے کہا کہ آرمی چیف سےملاقات انتہائی مفیدرہی، آرمی چیف نےعلماء کامؤقف سنا اور کہاہم مدارس کاتشخص ختم نہیں کرناچاہتے، آرمی چیف نےکہامدارس کانظام تعلیم تبدیل نہیں ہورہا جب کہ فیڈرل بورڈ میں مدارس کےعلماء کوبھی شامل کیاجائے گا۔

مفتی نعیم نے کہا کہ علماء کے بورڈ میں آنے سے معاشرتی برائیوں میں کمی ہوگی، علماء کو وقت دینے پرآرمی چیف کا شکر گزارہوں، اب مدارس کےطلباکوفیڈرل بورڈڈگری دےگا اور مدارس کا اپناتشخص باقی رہے گا اس میں فرق نہیں آئے گا۔

ممتاز عالم دین کا کہنا تھا کہ یہ اقدام مدارس کےمفادمیں اٹھایاگیاہے، وفاقی وزیرتعلیم سے مشورے کے بعد معاملہ حل ہو جائے گا اور مدارس کےنظام تعلیم کوایسابنایاجائےکہ کوئی تبدیلی نہیں کرسکے، مدارس کے حوالے سے اقدامات کے نتائج اچھے نکلیں گے۔

دفاعی تجزیہ کاراعجازاعوان نے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ قونصلررسائی کلبھوشن کاحق بنتاتھا، فوجی عدالت کی سزا کیخلاف ہائیکورٹ میں اپیل کرسکتےہیں اور عالمی عدالت نےمقدمہ آگےچلانےکی اجازت دےدی ہے جب کہ میں سمجھتاہوں کہ پاکستان اس کیس میں کامیاب رہا،۔

اعجازاعوان کا کہنا تھا کہ سزابرقراررہنے پر بھی کلبھوشن رحم کی اپیل آرمی چیف سےکرے گا جب کہ سزا برقرار رہنے پر کلبھوشن صدر مملکت سےرحم کی اپیل کرسکتاہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پہلی بارپاکستان اوربھارت عالمی عدالت میں انصاف کیلئےگئے، پاکستان کہہ رہا ہے ہماری فتح ہے، بھارت کہتا ہے ہماری جیت ہوئی، پاکستان اوربھارت میں حل طلب مسائل جوں کےتوں پڑےہیں، ماضی کی حکومتوں کے لیڈرشپ پر کرپشن کےالزامات ہیں، اپوزیشن نظام کوگرانےکی کوشش کررہی ہے۔

سینئرتجزیہ کارامتیازگل نے کہا کہ کلبھوشن کامعاملہ کسی کی فتح یاناکامی نہیں تھا، ہمیں واضح کراناتھاکہ کلبھوشن جعلی پاسپورٹ سے پاکستان آیا جب کہ عالمی عدالت فیصلےکاحافظ سعیدکی گرفتاری سےکوئی تعلق نہیں وہ تو پہلے ہی ضمانت کیلئے جا رہے تھے، پاکستان میں انسداددہشتگردی،ان کی فنانسنگ پرکام ہورہاہے ۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ عالمی عدالت کے جج نے کہاوہ جاسوس بھی ہےتواس کےحقوق بنتے ہیں۔

سینئرتجزیہ کارپی جے میر نے کہا کہ پاکستان نےعام آدمی کونہیں دہشتگردکوپکڑاتھا، سمجھتاہوں کہ پاکستان نےدرست اقدام اٹھایاہے اور پاکستان کوبھارت کامقابلہ عالمی سطح پرجاکرکرناہوگا۔

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay