مولانافضل الرحمان مذہب کے نام پرسیاست کر رہے ہیں، زرتاج گل

نیوزون کے خصوصی پروگرام “پرائم ٹائم ودتھ ٹی ایم” میں رہنماپیپلزپارٹی نویدقمر اور وفاقی وزیرزرتاج گل نے پروگرام میں شرکت کی اور ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال سمیت اہم معاملات پر میزبان طارق محمود سے تبادلہ خیال کیا۔

رہنماپیپلزپارٹی نویدقمرکاپروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ کچھ سالوں کے بعداس قسم کی بارش ہوتی ہے، 2011میں بھی ایسی ہی بارش ہوئی تھی،متعددعلاقوں سےپانی نکال دیاگیاہے، کچھ علاقوں سےپانی نکالنےکیلئےکوشش کررہےہیں اور لوگوں کی تکلیف کاہمیں احساس ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اگرکہیں کوئی کوتاہی رہی ہوتوہم اس پرسوال بھی کریں، بارش کےمسئلےکوسیاسی نہیں بناناچاہیے، جہاں کوتاہی ہوتی ہے اسے سامنے لانااپنافرض سمجھتےہیں، کوتاہیاں ہونی ہی نہیں چاہیےتھیں، پارلیمنٹ کی مضبوطی کیلئےہم کوشش کرتےرہیں گے،  پہلی حکومت دیکھی ہےجوپارلیمان کونہیں چلنےدےرہی، حکومت ایسےمسائل اجاگرکرتی ہےجس سےماحول خراب ہو اور ملکی تاریخ میں کبھی اتنےسیاستدان جیل نہیں گئے۔

نویدقمر نے کہا کہ الزامات کی بنیادپراپنادفاع کرنےکاحق نہیں چھینناچاہیے، جتنادباؤموجودہ حکومت اسپیکرپرڈال رہی ہےماضی میں نہیں رہا جب کہ پارلیمان کی بالادستی کی بات پروہ سمجھتےہیں پاورچھین رہےہیں، چیئرمین سینیٹ کےمعاملےپراپوزیشن نمبرزدکھاچکی ہے، مجھے لگتا ہے چیئرمین سینیٹ کے معاملےپرکامیاب ہوں گے، اگرکسی سینیٹرکودباؤمیں لیاجارہاہےتووہ بتائےگانہیں اور اس طرح ہوگاتوکون اس کوجمہوری عمل کہےگا۔

انہوں نے کہا کہ ہم ہوامیں بات نہیں کررہے،جانتےہیں تمام ہتھکنڈےاستعمال ہورہےہیں،جمہوریت کوکمزورکرنےوالی طاقت اپنی حرکتوں سےبازنہیں آئیں گی،ہم نےضیاء الحق سمیت متعددماشل لاء بھگتےہیں،کیاماضی کےمارشل لاء سےاپوزیشن ختم ہوگئی تھی،ان چیزوں سے پارٹیاں اورسیاسی شعورختم نہیں ہوسکتا،ایسےاقدامات سےجمہوری جذبہ ختم نہیں کیاجاسکتا۔ عوام کوحق حاکمیت دینا انتہائی اہم چیز ہے۔

نویدقمر کا کہنا تھا کہ جتناعوام پرظلم ہوگااتنی ہی مزاحمت کاسامناکرناپڑے گا، مولانافضل الرحمان کی بات سے اتفاق نہیں کرتا، مولانا کہتے ہیں کہ اگست میں حکومت نہیں رہےگی، میں سمجھتاہوں کہ حکومت پردباؤبڑھتارہےگا، ابھی جوطوفان آیاہواہےوہ اپنی جگہ ہے،آنےوالاوقت دیکھناچاہیے، موجودہ صورتحال میں عام آدمی گھرکابجٹ پورانہیں کرسکتا، کچھ چیزیں ایسی بھی ہورہی ہیں جومارشل لاءمیں نہیں ہوئیں، مشرف کےدورمیں بھی پارلیمنٹ سےمتعلق ایسےحکم نہیں آتےتھے جب کہ یہ کہہ رہے ہیں کہ کسی اسٹینڈنگ کمیٹی کی میٹنگ نہیں ہوگی۔

وفاقی وزیرزرتاج گل نے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ گندم اورروٹی کی قیمتوں میں اضافہ نہیں کیاگیا، اشیاء ضروریہ کومہنگانہیں ہونےدیں گے اور  اشیاء ضروریہ میں اضافہ خودساختہ کیاگیاتھا ہم اشیاء ضروریہ کی قیمتوں سےمتعلق مانیٹرنگ کریں گے۔ کراچی اس وقت ڈوباہواہے،11لوگوں کی اموات ہوگئی اور گڈگورننس کےدعویداراپنےدارالخلافہ کونہیں بچاسکے۔

وفاقی وزیرزرتاج گل نے کہا کہ 15سال سے پنجاب میں مسلم لیگ ن کی حکومت تھی، ایک بارش میں لاہوروینس بن جاتاہے، کرنٹ لگنے اور مختلف واقعات میں لوگوں کی اموات ہوتی ہیں، 10سال سے سندھ میں پیپلزپارٹی کی حکومت ہے، کراچی جیسےبڑےشہربھی سیلابی ریلے کاشکارہوتے ہیں، کراچی میں 12ہزارٹن یومیہ کچراساحل سمندرمیں پھینکاجارہاہے،  بیڈگورننس کی مثال دیکھنی ہے توکراچی کودیکھ لیں۔

زرتاج گل نے کہا کہ موسمیاتی تبدیلیوں کوہمیں تسلیم کرناپڑےگا، فوٹوسیشن کروانےسےبھی کوئی تبدیلی نہیں آتی، موسمیاتی تبدیلی گلوبل وارمنگ کاحصہ ہے، موسمیاتی تبدیلیوں میں زلزلہ،مون سون بارشیں ودیگرشامل ہیں، موسمیاتی تبدیلی کےلیےلانگ ٹرم پیٹرن بنانا پڑے گا، ہم ڈیم نےنہیں بنائے،پاکستان کاپانی ضائع ہوجاتاہے، این ڈی ایم اےسمیت متعلقہ اداروں سےمعاملےپربریفنگ لی، لیگی ترجمان اپنی پارٹی کے دفاع کے لیےتیارنہیں ہیں۔ لیگیوں کےہرروزکاسوشہ اورڈرامہ کوئی برداشت نہیں کرسکتا ، یہ صرف اپنےابوکی کرپشن بچاناچاہتی ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ مریم اورنگزیب کوچاہیےتھاکہ منی ٹریل دےدیتیں، اگرکوئی کیس بن جائےتواس کاجواب عدالت میں دیناپڑتاہے، اپوزیشن جواچھل کودمیڈیاکےسامنےکرتی وہ عدالت میں کرے، ہماری کسی سےکوئی ذاتی لڑائی نہیں ہے،بات صرف پاکستان کی ہے، 10سال میں31ہزارارب روپےقرضہ لیاگیا،اس کاجواب دیناپڑےگا۔  کرمنل سےکوئی دوستی نہیں ہوسکتی،ان کوحساب دیناپڑےگا۔ ٹیکس دہندگان کے پیسوں سے 45،45کروڑروپےٹپ دی گئی۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ آئین وقانون سب کیلئےبرابرہے،پاکستان کےپیسےواپس کرناپڑیں گے، صادق سنجرانی کوپی پی سمیت سب نے ملکر چیئرمین سینیٹ بنایاتھا،سینیٹ چیئرمین کسی پارٹی کانہیں ہوتا،یہ ریاست کی علامت ہوتاہے، یہ اچھااقدام تھاکہ چھوٹےصوبےکونمائندگی دی گئی،انہوں نےصادق سنجرانی کوبھی متنازعہ بنادیاہے اور اعظم سواتی اورشبلی فرازلوگوں سےملاقات کررہے ہیں۔

زرتاج گل کا کہنا تھا کہ مولانافضل الرحمان 14سال کشمیرکمیٹی کےچیئرمین رہے،  مولانافضل الرحمان ہرصورت حکومت میں رہنا چاہتے ہیں اور مولانافضل الرحمان حکومت پرچڑھائی کرناچاہتےہیں۔

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay