چیئرمین سینیٹ کے معاملے پر بیک ڈورملاقاتیں ہوئیں، فوادچوہدری

نیوزون کے خصوصی پروگرام “پرائم ٹائم ودتھ ٹی ایم” میں وفاقی وزیرِ سائنس و ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے شرکت کی اور ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال سمیت اہم معاملات پر میزبان طارق محمود سے تبادلہ خیال کیا۔

وفاقی وزیرِ سائنس و ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ چیئرمین سینیٹ کے معاملے پربیک ڈور ملاقاتیں ہوئیں، چیئرمین سینیٹ سےبھی ملاقات ملاقات ہوئی اور نمبرگیم میں اپوزیشن کی اکثریت ہے جب کہ صادق سنجرانی کوتبدیل کرنے کا کوئی فائدہ نظرنہیں آتا۔ بظاہرجونمبرگیم نظرآرہی ہےاس سےپانسہ پلٹ جائے گا۔

فواد چوہدری نے کہا کہ شبلی فرازسینیٹ کاالیکشن لڑےہمارے5ووٹ تھے، اس وقت دھونس،دھاندلی کاکوئی الزام نہیں لگاتھا۔ صادق سنجرانی کے ذاتی طورپرسینیٹرزسےتعلقات ہیں وہ سینیٹرزصادق سنجرانی کیخلاف ووٹ نہیں دیں گے۔ مجھے لگتاہے الیکشن کافی ٹف ہوگا اور اپوزیشن کے سینیٹرزصادق سنجرانی کوووٹ دیں گے۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ ن لیگ اورپی پی کےغم ایک جیسے ہیں، دونوں کے ابو پھنسے ہوئے ہیں، ابومچاؤمہم نےدونوں پارٹیوں کوایک کردیاہے، یہ سوچ رہےہیں کہ ہم اس شکنجےسےکیسےجان چھڑائیں، پیپلزپارٹی سندھ تک محدودہوگئی،ن لیگ پنجاب تک محدودہوگئی۔ دونوں پارٹیاں کااتحادہوگیاہے،اسی بنیادپرالیکشن لڑیں گے۔ بلاول لاہورپہنچ کرمریم نوازکولیڈربنالیتےہیں۔ ن لیگ والےکراچی پہنچ کر بلاول کو لیڈر بنالیتے ہیں۔ ہم احتساب کی بات نہ کریں توکوئی جھگڑاہی نہ ہو۔

فواد چوہدری نے کہا کہ اپوزیشن کوسیاست سےکوئی دلچسپی نہیں ہے، اپوزیشن کوصرف اپنےپیسےبچانےمیں دلچسپی ہے۔ عمران خان کی ضدہےکہ میں نےلوگوں کاپیسہ واپس لاناہے۔ سیاست میں شوروغل عمران خان کےاسٹینڈکی وجہ سےہے اور احتساب کے ادارے پہلے بھی تھے مگر پہلے نان فکنشل تھے۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ سوائے راناثناءاللہ کیس کےکوئی کیس ہمارابنایاہوانہیں ہے، چیئرمین نیب بھی ان کےدورکےہیں، ٹرانسپرنسی رپورٹ مکمل بکواس ہے اور انصارعباسی پروپیگنڈاٹائپ رپورٹ شائع کی ہے، انکوائری کمیشن70سالہ قرضوں کی تحقیقات کررہاہے۔ 10سالوں میں 24ہزارٹریلین قرضہ کہاں خرچ ہوا؟َ ماضی میں منگلا،تربیلا،موٹروےاورنئےشہربنائےگئے۔ ایک مافیا ہے جوشریفوں کے آگے گرد کی دیوار کھڑی کرناچاہتاہے۔ عرفان صدیقی صحافی نہیں مسلم لیگ ن کےلیڈرہیں۔

فوادچوہدری نے کہا کہ کرایہ داری ایکٹ میں عرفان صدیقی کوپتانہیں کیوں پکڑاگیا؟ راناثنااللہ ہویاکوئی بھی ہوکسی پرجعلی کیس نہیں بنناچاہیے۔ اےاین ایف اپنےالزامات پرشدت سےقائم ہے۔ اس معاملےپرگفتگوکرنامناسب نہیں۔ کس سیاسی لیڈرکی جرأت ہوگی کہ امریکا سے کہے مجھےوزیراعظم بناوادیں۔ مولاناکاخیال ہے جواسلام آبادجلانےمیں مددنہ کرےوہ اسلام مخالف ہے۔ سیاسی سرگرمیوں پرہمیں کوئی اعتراض نہیں ہے اور تمام اپوزیشن پارٹیزاحتجاج کاحق حاصل ہے۔  آئین وقانون کےاندررہ کراحتجاج کیاجائے، یہ نہیں ہوسکتاآپ اسلام آبادمیں قبضہ کرلیں،ریاست اس کی اجازت نہیں دیتی۔

ان کا کہنا تھا کہ اپوزیشن کےساتھ ہماراکوئی جھگڑاہی نہیں ہے، یہ چاہتےہیں کہ نوازشریف اورزرداری کےکیسزپرہاتھ نہ ڈالیں، اپوزیشن یہ ڈیمانڈنہ کرےکہ ان کیسزپرہم ہاتھ نہ ڈالیں، اگریہ باہرجاناچاہتےہیں توپاکستان کےلوگوں کےپیسےواپس کریں۔ ہم اپوزیشن کواین آراودینابرداشت ہی نہیں کرسکتے۔ ان لوگوں کوعوام تسلیم کرلیں کہ یہ بینظیرکابیٹاہےیاشہبازشریف کابیٹاہے۔ ہم مڈل کلاس طبقےکومعاشی تحفظ نہیں دے پا رہے۔ پانی،تعلیم،صحت اورسیکیورٹی گورننس کی بنیادی چیزیں ہیں۔ ان4چیزوں پرہماری توجہ مرکوزہے۔ ہم نےمعاشی پالیسی کی سمت تبدیل کی ہے۔

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay