فلموں کے بارے میں رائے دینا اسلامی نظریاتی کونسل کا کام نہیں ،چیئرمین اسلامی نظریاتی کونسل

چیئرمین اسلامی نظریاتی کونسل کا کہنا ہے کہ ہم فلم کے بارے میں فیصلہ نہیں صرف رائے دیں گے ، فیصلہ دینا صرف متعلقہ اداروں کا کام ہے اورکوئی بھی رائے کسی دباؤ میں آ کر نہیں کریں گے۔

تفصیلات کے مطابق مرکزی فلم سنسر بورڈ نے فلم ’’زندگی تماشا ‘ کے معاملے پر اسلامی نظریاتی کونسل سے رجوع کرنے کا فیصلہ کیا تھا ۔ اس بارے میں اظہار خیال کرتے ہوئےچیئرمین اسلامی نظریاتی کونسل قبلہ ایاز کا کہنا ہے کہ فلموں کے بارے میں رائے دینا اسلامی نظریاتی کونسل کا کام نہیں۔

چیئرمین اسلامی نظریاتی کونسل ڈاکٹر قبلہ ایاز نے کہا ہے کہ فلموں کے بارے میں رائے دینا اسلامی نظریاتی کونسل کا کام نہیں، اگر سرکار ہم سے کوئی بات پوچھے تو یہ ہماری ذمہ داری ہے کہ اس کا جواب دیا جائے۔

مزید پڑھیےسرمد کھوسٹ کو ’زندگی تماشا‘ کی ریلیز روکنے کیلیے دھمکیاں

انہوں نے مزید کہا کہ حکومت نے ’فلم زندگی تماشا ہے‘ کا معاملہ ہمارے پاس بھیجا ہے اس کا جائزہ لیں گے اور اس کے لئے فلم اور ڈراموں کے ماہرین سے مشورہ لیں گے۔

چیئرمین اسلامی نظریاتی کونسل کا یہ بھی کہنا ہے کہ ہم فلم کے بارے میں فیصلہ نہیں صرف رائے دیں گے ، فیصلہ دینا صرف متعلقہ اداروں کا کام ہے اورکوئی بھی رائے کسی دباؤ میں آ کر نہیں کریں گے۔

واضح رہے کہ پنجاب اور سندھ حکومت نے فلم ’’زندگی تماشا ہے‘ کی ریلیز روکنے کا اعلان کرتے ہوئے فلم کا جائزہ لینے کے لیے کمیٹی قائم کی تھی۔ فلم زندگی تماشا 24 جنوری کو ریلیز ہونا تھی جبکہ حکومت پنجاب نے فلم کے ریویو کے لیے 3 فروری کی تاریخ دی ہوئی ہے۔

مزید پڑھیے :فلم زندگی تماشا’ نمائش موخر: تنقیدی جائزے کیلئےاسلامی نظریاتی کونسل بھیجنےکا فیصلہ

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay