صابن اور گرم پانی کا استعمال کورونا سے بچاؤ میں زیادہ مفید: ماہرین

پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لینے والے کورونا وائرس نے سب کی نیندیں چھین لی ہیں ہر کسی کی یہ خواہش ہے کہ جلد از جلد اس و بائی مرض سے جان چھوٹ جائے اور لوگ پھر سے پرُسکون اور صحت مند اندگی بسر کرنے لگیں ۔

اس حوالے سے سوشل میڈیا اور ٹیلی ویژن پرمختلف طریقوں اور ٹوٹکوں کے ساتھ احتیاطی ردابیر بھی بتائی جا رہی ہیں جن کو اختیا رکر کہ ناصرف اس مرض سے بچاؤ ممکن ہے بلکہ اس کا سدباب بھی ہوسکتا ہے۔

اس ہی حوالے سےغیرملکی میڈیا نے ماہرین صحت کی آراء کی روشنی میں ایک رپورٹ نشر کی ہے جس میں ماہرین نے گرم پانی اور صابن کے ساتھ ہاتھ منہ دھونے کی تجویز پیش کی ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر پانی گرم ہو کم سے کم 20 سکینڈز تک ہاتھ دھوئے جائیں اور اگر پانی ٹھنڈا ہو تو ہاتھ دوھونے کا دورانیہ 30 سکینڈ ہونا چاہیے۔ یہ طریقہ ہرطرح کے متعدد امراض بالخصوص کورونا جیسی خطرناک بیماری سے بچاؤ میں بہت مفید ثابت ہوسکتا ہے۔

پیٹسبرگ چلڈرن ہاسپٹل میڈیکل سینٹرمیں شعبہ امراض اطفال اور متعدی امراض کے محکمہ کے سربراہ ڈاکٹر جان ولیم کہتے ہیں کہ یہاں چار مختلف وائرل وائرس ہیں جو لوگوں کے درمیان مستقل طور پر ہر سال گردش کرتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ وہ بنیادی طور پر نزلہ زکام کا سبب بنتے ہیں۔ درحقیقت وہ عام نزلہ زکام ایک تہائی حصہ ہوتے ہیں۔ لیکن وہ موت کا سبب نہیں بنتے ہیں۔

نہ صرف پانی اور صابن سے کورونا وائرس کا خاتمہ ہوتا ہے ، بلکہ یہ فلو جیسے دوسرے مضر وائرل وائرس کو بھی ہلاک کرتا ہے۔ کورونا وائرس انسان کے سانس کے نظام کو متاثر کرتا ہے اور بعض معاملات میں اس سے نمونیا کی بیماری اور بڑھ جاتی ہے۔

ان کا کہنا ہےکہ گرم پانی تن تنہا بیکٹیریا یا وائرس کو نہیں صابن کے ساتھ گرم پانی زیادہ بہتر اور تیز جھاگ پیدا کرتا ہے جو کسی بھی گندگی ، بیکٹیریا یا وائرس سے آسانی سے چھٹکارا حاصل کرنے میں مدد کرتا ہے۔

یاد رہے کہ ‘کوویڈ ۔19’ ایک سب سے زیادہ متعدی بیماری ہے جس نے پچھلی دہائیوں میں کسی دوسرے وائرس کی نسبت ہمارے سیارے کو سب سے زیادہ متاثر کیا ہے۔

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay