چین کا خصوصی طیارہ امدادی سامان اور ڈاکٹروں کی ایک ٹیم لے کراسلام آباد پہنچا

چین کی حکومت کی طرف سے کورونا سے نمٹنے کی مہارت رکھنے والی8 رکنی طبی ٹیم اور امدادی سامان لے کر خصوصی طیارہ اسلام آباد پہنچ گیا۔

ائیر پورٹ پروزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی اور چیئرمین این ڈی ایم اے لیفٹیننٹ جنرل محمد افضل نے چینی مہمانوں کا استقبال کیاپاکستان میں چین کے سفیر بھی اس موقع پر موجود تھے۔

قومی ادارہ صحت میں ایگزیکٹو ڈائریکٹر میجر جنرل عامر اکرام نے مہمانوں کا استقبال کیا۔ چینی ڈاکٹرز کو کل قومی ادارہ صحت میں ایگزیکٹو ڈائریکٹر میجر جنرل عامر اکرام بریفنگ دینگے۔

ڈاکٹر ظفر مرزا کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس سے بچاؤ تیزی سے موثر اقدامات کر رہے ہیں۔ چین مشکل کی اس گھڑی میں پاکستان کی بھر پور امداد کر رہا ہے، چینی ڈاکٹرز کے تجربات سے بھر پور استفادہ کیا جائے گا۔

ائیر پورٹ پروزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی اور چیئرمین این ڈی ایم اے لیفٹیننٹ جنرل محمد افضل نے چینی مہمانوں کا استقبال کیاپاکستان میں چین کے سفیر بھی اس موقع پر موجود تھے۔

اس موقع پر این ڈی ایم کے چیئرمین نے کہا کہ کو رونا کے خلاف چین نے بروقت مدد بہم پہنچائی۔ آنے والے سامان میں کورونا کی تشخیص کی ایک لاکھ پانچ ہزار سے زائد کٹس شامل ہیں۔

اس کے علاوہ بیس لاکھ سے زائد ماسک اور 77 ہزار میڈیکل کور بھی بھیجے گئے ہیں۔خصوصی پرواز میں217 ونٹیلیٹرز اور 50ہزار میڈیکل دستانے بھی شامل ہیں۔ علی بابا فاونڈیشن اور جیک ما فاونڈیشن کی جانب سے 50 ہزار ٹیسٹنگ کٹس اور 5 لاکھ حفاظتی ماسک پاکستان کو دیئے جا چکے ہیں۔

 چین نے درہ خنجراب کے ذریعے دو ٹن ماسک، ٹیسٹ کٹس، وینٹی لیٹرز، طبی حفاظتی لباس بھی پاکستان کے حوالے کئے ہیں۔ چینی طبی ماہرین کی یہ ٹیم دو ہفتے تک پاکستان میں قیام کرے گی۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے ہوائی اڈے پر طبی سامان وصول کرنے کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ چین نے پاکستان کو کرونا وائرس کے خلاف جنگ میں مدد کے لئے دوائوں ، ضروری ساما ن اور ٹیسٹنگ کٹس کی فراہمی کے ذریعے ہمارے ساتھ اظہار یکجہتی کیا ہے ۔

 انہوں نے طبی معاونت پر چینی حکومت اور عوام کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہیلتھ ورکرز کا تحفظ حکومت کی اولین ترجیح ہے جو اپنی جان خطرے میں ڈال کر کرونا وائرس کے مریضوں کا علاج کر رہے ہیں۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ وینٹیلیٹرز اور تشخیصی استعداد کا ر کو دو گنا کیا جائے گا۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان میں واک تھر و سکینر بھی پہنچ جائے گا جس سے تشخیصی صلاحیت میں واضح بہتری آئے گی۔ انہوں نے یقین ظاہر کیا کہ پاکستان کا طبی عملہ کرونا وائرس کے مریضوں کے علاج کے لئے چینی ڈاکٹروں کے تجربات سے استفادہ کرے گا۔

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay