زیادتی کے مجرمان کیلئےکیسٹریشن قانون لانے کی اصولی منظوری

وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے زیادتی کے واقعات کی روک تھام کے لیے زیادتی کے مجرمان کے لیے کیسٹریشن کا قانون لانے کی اصولی منظوری دے دی گئی ہے۔

وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارات وفاقی کابینہ اجلاس ہوا، وفاقی کابینہ کے اجلاس کے دوران 14 نکاتی ایجنڈے پر بات کی گئی۔

اس دوران کابینہ کے وزرا کی جانب سے زیادتی کےواقعات کی روک تھام کے لیے قانون سازی پر بحث کی گئی، وفاقی کابینہ کی جانب سے زیادتی کیسز کے مجرمان کی سخت سزاؤں پر مشتمل سفارشات پیش کی گئی جس کی وزیر اعظم عمران خان نے اصولی منظوری دیتے ہوئے کہا ہے کہ قانون سازی میں کسی قسم کی تاخیر نہیں کریں گے۔

کا بینہ کے ارکان سے گفتگو کے دوران وزیر اعظم نے کہا کہ عوام کے تحفظ کے لیے واضح اور شفاف انداز میں قانون سازی ہوگی۔

کابینہ کے اجلاس کے دوران بعض وفاقی وزراء کا زیادتی کے مجرمان کو پھانسی کی سزا کا قانون کا حصہ بنانے کا مطالبہ کیا گیا، بعض وزراء کی جانب سے رائے کا اظہار کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ریپ مجرمان کو سرعام پھانسی کے تختے پر لٹکایا جانا چاہیے ۔

وزیراعظم عمران خا ن نے کہا اور متاثرہ خواتین یا بچے بلاخوف وخطر اپنی شکایات درج کراسکیں گے، متاثرہ خواتین وبچوں کی شناخت کے تحفط کا خاص خیال رکھا جائے گا۔

ذرائع کے مطابق وفاقی وزیر فیصل واوڈا، اعظم سواتی اور نورالحق قادری نے بھی پھانسی کی حمایت کی جبکہ وزیراعظم عمران خان نے اپنی رائے کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ابتدائی طور پر کیسٹریشن کے قانون کی طرف جانا ہوگا۔

وفاقی کابینہ کے اجلاس کے دوران بریفنگ میں بتایا گیا کہ قانونی ٹیم نے ریپ قانون آرڈیننس کے مسودہ پر کام مکمل کرلیا ہے، خواتین پولیسنگ، فاسٹ ٹریک مقدمات، اور گواہوں کا تحفظ بنیادی حصہ ہوگا۔

وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کے اجلاس کے دوران مزید ملکی سیاسی معاشی صورتحال کا بھی جائزہ لیا گیا، اجلاس میں اپوزیشن کی تحریک سے نمٹنے اور کوروناوائرس کی صورتحال پر بھی بات چیت کی گئی۔

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay