وزیراعظم نےپارٹی ترجمانوں کواپوزیشن کوٹف ٹائم دینےکی ہدایت کردی

وزیراعظم عمران خان نے اپوزیشن اتحاد پی ڈی ایم کو ہر فورم پر جواب دینے کا فیصلہ کرتے ہوئے ترجمانوں کو اپوزیشن رہنماؤں کے کریشن کیسز اجاگر کرنے کا ٹاسک دیدیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان کے زیر صدارت پارٹی رہنماؤں کا اجلاس ہوا جس میں عالمی وبا کے خطرات، اس کے تدارک اور ملک کی سیاسی صورتحال پر سیر حاصل گفتگو کی گئی۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ سینیٹ انتخابات میں اپوزیشن کو بھرپور جواب دیا جائے گا۔

وزیراعظم عمران خا ننے ایک بارپھراپوزیشن پرتنقید کرتے ہوئے کہا کہ پی ڈی ایم فارغ ہوچکی ہے،  پی ڈی ایم اپنی موت آپ مرررہی ہے،حکومت کوپی ڈی ایم سےکوئی خطرہ نہیں،پی ڈی ایم نےکروناکےدوران عوام کی زندگی سےکھیلنےکوشش کی،اپوزیشن کی پوری تحریک این آراوکےلیےہےجونہیں دوں گا۔

وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ کوئی بھی معاشرہ احتساب کے بغیر آگے نہیں بڑھ سکتا، احتساب کاعمل جاری رہے گا۔ موجودہ حکومت ترقی کے سفر پر گامزن ہے۔ حکومت کو اپوزیشن اتحاد پی ڈی ایم سے کوئی خطرہ نہیں ہے۔ پی ڈی ایم نے وبا کے دوران عوام کی زندگی سے کھیلنے کوشش کی۔ اپوزیشن کی پوری تحریک این آر او کیلئے ہے جو انھیں کبھی نہیں ملے گا۔

وزیراعظم نے ترجمانوں کو معاشی کامیابیاں اجاگر کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ کمزور معیشت کو درست ٹریک پر لگا دیا۔ تمام معاشی اشاریے درست سمت میں ہیں۔ نئے سال میں کارکردگی مزید بہتر کرنے پر توجہ ہوگی۔

انہوں نے اس موقع پر ترجمانوں کو اپوزیشن رہنماؤں کے کریشن کیسز اجاگر کرنے کا ٹاسک بھی دیا اور کہا کہ اپوزیشن کا احتساب شروع ہوا تو سب اکٹھے ہو گئے۔ ماضی کی حکومتیں قومی خزانے کو لوٹتی رہیں۔

اس سے قبل وزیراعظم عمران خان نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ نیب نے 2019 اور 2020 میں 389 ارب روپے کی ریکوری کی، نیب نے 2008 سے 2018 تک صرف 104 ارب روپے ریکور کیے، اینٹی کرپشن پنجاب نے 27 ماہ میں 206 ارب روپے ریکور کیے، بدعنوان حکمرانوں کے 10 سالہ دور میں صرف 3 ارب روپے ریکور کیے گئے، یہ واضح اشارہ ہے کہ احتساب تب ہوتا ہے جب ادارے آزادانہ کام کرتے ہیں۔

 

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay