سینیٹ انتخابات : 37 نشستوں پر جاری پولنگ کا وقت ختم، گنتی جاری

ایوان بالا کی 37 نشستوں کے لیے انتہائی سخت سکیورٹی انتظامات میں پر امن طریقے سے قومی اور صوبائی اسمبلیوں میں شام پانچ بجے تک بلا تعطل پولنگ  کا عمل جاری رہا۔

الیکشن کمیشن پاکستان کے مطابق قومی اسمبلی میں 341 میں سے 340 ووٹ کاسٹ ہوئے ہیں۔ جبکہ صوبائی اسمبلیوں میں بلوچستان اسمبلی 12 نشستوں کے لیے 65 ووٹ،

خیبر پختونخوا اسمبلی میں 145 میں سے 107 ووٹ، سندھ اسمبلی میں 167 ارکان نے ووٹ کاسٹ کیے ہیں۔

واضح رہے کہ پنجاب کی 11 نشستوں پر تمام امیدوار بلامقابلہ منتخب ہوچکے ہیں۔ جن کا باضابطہ اعلان الیکشن کمیشن اب جاری کرے گا۔

یاد رہے کہ آج اسلام آباد کی 2، سندھ کی 11، خیبرپختونخوا کی 12 اور بلوچستان کی 12 نشستوں پر خفیہ رائے شماری کی گئی ہے۔ صوبوں کی نشستوں پر ارکان صوبائی اسمبلی اور اسلام آباد کی 2 نشستوں پر ارکان قومی اسمبلی نے اپنا حق رائے دہی استعمال کیا۔

الیکشن کمیشن کی جانب سے جاری تفصیلات کے مطابق وفاق اور صوبوں میں جنرل نشستوں پر 39 امیدوار آمنے سامنے تھے۔ جن میں خواتین 18، ٹیکنو کریٹ 13 اور اقلیتی نشستوں پر 8 امیدوار مدمقابل تھے۔ اسلام آباد کی جنرل نشست پر پی ٹی آئی کے ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ اور پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے متفقہ امیدوار یوسف رضا گیلانی کے درمیان کانٹے کا مقابلہ رہا۔ تاہم ووٹوں کی گنتی کا عمل جاری ہے۔

قومی اسمبلی میں پی ٹی آئی کی 157 نشستیں ہیں۔ اور اتحادیوں میں ایم کیو ایم کی 7، مسلم لیگ ق کی اور بی اے پی کی 5، 5 جی ڈی اے کی 3، شیخ رشید کی آل پاکستان مسلم لیگ اور جمہوری وطن پارٹی کی 1، 1 نشست جبکہ 1 آزاد امیدوا اسلم بھوتانی حکومت کے ساتھ کھڑے ہیں۔ اس طرح پاکستان تحریک انصاف کو قومی اسمبلی میں 180 ارکان کی حمایت حاصل ہے۔

دوسری طرف متحدہ اپوزیشن کی جماعتوں میں سے مسلم لیگ ن کی 83، پیپلزپارٹی کی 55، متحدہ مجلس عمل پاکستان کی 15، اے این پی اور جماعت اسلامی کی 1،1 نشست جبکہ 3 آزاد امیدواروں کا ساتھ بھی حاصل ہے۔ متحدہ اپوزیشن کے مجموعی اراکین کی تعداد 161 بن جاتی ہے۔ یوں وفاق کی جنرل نشست پر اپوزیشن کو جیتنے کے لئے حکومتی اتحاد میں سے 10 ووٹ توڑنے ہوں گے۔

اس وقت قومی اسمبلی کا ایوان 341 اراکین پر مشتمل ہے۔ جن میں سے ایک امیدوار نے ووٹ کاسٹ نہیں کیا۔ تاہم جیتنے والے امیدوار کو 170 ووٹ درکارہوں گے۔ کاسٹ ووٹوں میں سے 51 فیصد ووٹ حاصل کرنے والا امیدوار فاتح قرار پائے گا۔

جنرل نشست کا بیلٹ پیپر سفید، خواتین کی نشست کا گلابی ، ٹیکنوکریٹ کا سبز اور غیر مسلم نشست کے لیے بیلٹ پیپر زرد رنگ کا ہے۔

واضح رہے کہ ووٹرز اپنی ترجیحات کے مطابق امیدواروں کو ووٹ دیں گے۔ بیلٹ پیپر پر امیدواروں کے سامنے خانے میں عددی ترجیحات 1، 2، 3 لکھ کر ووٹ دیا جائے گا۔

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay