گزشتہ مالی سال 2020 میں وزیراعظم آفس کے اخراجات میں واضح کمی دیکھی گئی

وزیراعظم آفس کے اخراجات میں کمی لانے کے وعدے کے مطابق گزشتہ مالی سال 2020 میں وزیراعظم آفس کے روزمرہ کے اخراجات کی مد میں نمایاں کمی لائی گئی ہے۔

واضح رہے کہ وزیراعظم عمران خان نے اقتدارمیں آنے سے پہلے اور وزارت عظمیٰ کا منصب سنبھالتے وقت وزیراعظم ہاوس اور وزیراعظم آفس کے اخراجات میں کفایت شعاری کے ضمن میں مثال قائم کرنے کا وعدہ کیا تھا۔

وزیراعظم عمراں خان نے عوام کے پیسوں کے ممکنہ تحفظ کیلئے دیگر حکومتی عہدیداروں کیلئے بھی ایک مثال قائم کی جس کی تصدیق مالی سال20 ۔ 2019 کے بجٹ اوروزارت خزانہ کی دستاویزات سے بھی ہورہی ہے۔

تفصیلات کے مطابق بجٹ و سرکاری دستاویزات کے مطابق وزیراعظم آفس کیلئے آپریٹنگ اخراجات کی مد میں مالی سال 2020 میں 218 ملین روپے مختص کئے گئے تھے۔ تاہم کل اخراجات کا حجم 46 ملین روپے ریکارڈ کیا گیا ہے۔ جو کہ تخمینہ شدہ بجٹ سے بہت کم ہے۔ سفر اور ٹرانسپورٹ اخراجات کی مد میں ایک کروڑ روپے کی بچت کی گئی ہے۔ دستاویزات کے مطابق تفریح وتحائف کی مد میں مالی سال 2020 میں 15 لاکھ روپے مختص کئے گئے تھے۔ تاہم اس مد میں محض ایک ہزار روپے صرف کیے گئے۔ اسی طرح مادی اثاثہ جات کی مد میں 4 کروڑ روپے، ٹور اخراجات کی مد میں 1.2 ملین روپے جبکہ متفرق اخراجات کی مد میں 2 کروڑ روپے، بجٹ و سرکاری دستاویزات کے مطابق نمایاں کمی صوابدیدی گرانٹس کی مد میں ہوئی ہے۔ اس مد میں مالی سال 2020 کیلئے ایک ملین روپے مختص کئے گئے تھے تاہم اصل اخراجات محض ایک ہزار روپے رہے ہیں۔ اسی طرح گھریلو ملازمین کے معاوضہ جات کی مد میں تقریباً 3 کروڑ روپے کی بچت ہوئی ہے۔

مزید تفصیلات کے مطابق پرائم منسٹرز ایسٹیٹ گارڈن ایسٹبلشمنٹ کی مد میں تقریباً ایک کروڑ روپے کی بچت کو یقینی بنایا گیا ہے۔

واضح رہے کہ میزانیہ میں دو طرح کے مصارف ہوتے ہیں۔ ایک ملازمین سے متعلق اخراجات۔ جبکہ دوسرے آپریٹنگ اخراجات ہوتے ہیں۔ وزیراعظم آفس کے ملازمین اوراہلکاروں سے متعلق اخراجات تنخواہ اور الاونسز پر مشتمل ہیں۔

گزشتہ مالی سال 2020 میں وزیراعظم آفس کے ملازمین اور اہلکاروں سے متعلق اخراجات میں معمولی اضافہ ہوا ہے جو ملازمین کی سالانہ ترقی کی وجہ سے ہوا ہے۔

Junior - Taleem Aam Karaingay - Juniors ko Parhaingay