معروف اداکارہ مدیحہ گوہر انتقال کر گئیں

کراچی : ٹی وی اور اسٹیج کی معروف اداکارہ مدیحہ گوہر لاہور میں 62 سال کی عمر میں انتقال کرگئیں، وہ گزشتہ 3 سال سے کینسر کے مرض میں مبتلا تھیں۔
مدیحہ گوہر معروف ڈرامہ نویس، ڈائریکٹر اور رائٹر شاہد محمود ندیم کی اہلیہ تھیں، اداکارہ فریال گوہر  کی چھوٹی بہن ہیں اور سویرا ندیم ان کی  بیٹی ہیں ۔

انہوں نے اجوکا تھیٹر کے زیر اہتمام پاکستان، بھارت، یورپ اور امریکا میں 3 درجن سے زائد اسٹیج ڈرامے کیے۔

مدیحہ گوہران کی  فنی خدمات پر 2003ء میں تمغۂ امتیاز سے اور 2014ء میں فاطمہ جناح ایوارڈ سے بھی نوازا گیا ۔لندن یونیورسٹی سے تھیٹر سائنس میں ڈگری حاصل کرنے  والی مدیحہ گوہر نے گورنمنٹ کالج سے انگلش میں ایم اےکیا ۔

مدیحہ گوہر نے خواتین کے حقوق کیلئے1983ء میں اجوکا نام سےتنظیم بنائی جو ایشیاء اور یورپ میں فعال ہے، اسی نام سے تھیٹر کی بنیاد رکھی،وہ پچھلے 34 برس سے اجوکا تھیٹر چلا رہی تھیں ،جس کے ذریعے انہوں نے سماجی مسائل کو اجاگر کیا۔

2006ء میں اجوکا کےزیرِاہتمام سماجی امور کے کام کے اعتراف میں ہالینڈ کی جانب سے انہیں پرنس کلوس ایوراڈ دیاگیا

اجوکا تھیٹر کی جانب سے پیش کردہ  مشہور ڈراموں میں ٹوبہ ٹیک سنگھ، میرا رنگ دے بسنتی چولا، لیٹرز ٹو انکل سام، ایک تھی نانی، کون ہے یہ گستاخ اور لو پھر بسنت آئی، شامل ہیں۔

مدیحہ گوہر کا جنازہ کل شام ان کی رہائش گاہ 24سرور روڈ کینٹ سے اٹھایا جائے گا، تدفین لاہور کے قبرستان میں ہوگی۔