وزیراعظم کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس کل ہوگا

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس کل ہوگا جس میں وزارت کیڈکوختم کرنے کی منظوری سمیت اہم فیصلے متوقع ہیں۔

13 ستمبر کے روز پرائم منسٹر ہاؤس میں وزیر اعظم عمران کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس منعقد ہوگا  جس کے دوران صحت سےمتعلقہ امور،وزارت نیشنل ہیلتھ سروسز، چیئرمین بورڈآف انویسٹمنٹ کی تعیناتی سمیت وزارت کیڈ کوختم کرنے کی منظوری دی جائے گی۔

اجلاس کے ایجنڈے میں سپریم کورٹ کے فیصلے کے مطابق انکم ٹیکس ترمیم آرڈیننس کی منظوری بھی متوقع ہے۔ پاکستان نیوی ایکٹ1961میں ترمیم اور اثاثہ جات کی ریکوری یونٹ کی منظوری بھی ایجنڈے میں شامل ہے۔

وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کے اجلاس میں ریگولیٹری نظام کواسٹریم لائن کرنے کی تجویزپر بھی غورکیا جائے گا۔

حکومت نے وفاقی بجٹ پیش کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور فنانس بل میں ترامیم کے لیے مسودہ تیار کرلیا ہے جس کے تحت گزشتہ حکومت میں ٹیکس استثنیٰ کے معاملے میں بھی ترمیم لائے جائے گی۔

وفاقی کابینہ کے 13 ستمبر کو ہونے والے اجلاس میں بجٹ ترامیم کی منظوری کا امکان پہلے ہی ظاہر کیا جاچکا ہے۔

خیال کیا جارہا ہے کہ فنانس ایکٹ میں ترامیم  سے 800 ارب روپے کا اضافی ریونیو حاصل ہوگا۔ حکومت نے ترقیاتی بجٹ میں 400 ارب روپے کٹوتی کا ارادہ بھی رکھتی ہے ۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ نئے وفاقی بجٹ میں ایف بی آر میں متعدد اقدامات سے 400 ارب روپے سے زیادہ کے ٹیکسز لگانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ مالیاتی بل میں ترامیم کا مقصد بجٹ اور تجارتی خسارہ کم کرنا ہے

ذرائع کے مطابق حکومت ٹیکس ریونیو بڑھانے کے لیے فنانس بل میں تجاویز پیش کرے گی جب کہ تمام درآمدی اشیا پر ایک فیصد ریگولیٹری ڈیوٹی کی تجویز دی جائے گی جس سے حکومت کو خاطر خواہ آمدنی حاصل ہونے کی امید ہے۔

ذرائع کا کہنا ہےکہ اسی سلسلے میں 14 ستمبر کو قومی اسمبلی کا اجلاس طلب کیا گیا ہے۔ اجلاس کے دوران فنانس بل اسمبلی میں پیش کرے گی۔