فاطمہ ثریا بجیا کی 88 ویں سالگرہ پر گوگل کا خراج عقیدت

Fatima-Surayya-Bajia

پاکستان کی کی مشہور و معروف ڈرامہ نگار اور ادیبہ فاطمہ ثریا بجیا کی 88 ویں سالگرہ پردنیا کے سب سے بڑے سرچ انجن گوگل نے انھیں خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے گوگل نے اپنا ڈوڈل ان کے نام کردیا۔

آگہی،آبگینے،بابر،تاریخ وتمثیل،گھراک نگر اورفرض اک قرض فاطمہ ثریاکےشاہکارڈراموں میں سے ہیں فاطمہ ثریابجیانےشمع،افشاں،عروسہ،تصویر،زینت اوراناجیسےشہر آفاق ڈرامےلکھے ۔ جس میں عورت کے کردار ،حقوق اور فرائض پر ایسی جامع روشنی ڈالی کے ہر عورت اس کو مشعل راہ بنا کر ایک پر سکون اور کامیاب زندگی گزار سکتی ہے ۔
فاطمہ ثریابجیاپھول راہی سرسوں،تصویرکائنات،آساری،آرضوکی تخلیق کار بھی تھیں سسی پنوں،انارکلی اوراق اورجسےچاہےجیسےڈرامےبھی بجیاکےقلم سےلکھےگئے ہیں ۔

فاطمہ ثریا بجیا یکم ستمبر1930 کو بھارت کے شہر حیدرآباد دکن میں پیدا ہوئیں اور قیام پاکستان کے بعد اہل خانہ کے ہمراہ کراچی میں سکونت اختیار کی۔

ان کی خدمات کے اعتراف میں حکومت پاکستان نے انہیں تمغہ برائے حسن کارکردگی اور ہلا ل امتیاز سے نوازا جبکہ جاپان نے بھی انہیں اپنا اعلیٰ ترین شہری اعزاز عطا کیا انہوں نے سندھ حکومت کی مشیر برائے تعلیم کی حیثیت سے بھی خدمات سرانجام دیں۔

 

فاطمہ ثریا بجیا کےبہن بھائیوں میں انور مقصود ، زہرہ نگاہ اور زبیدہ طارق مرحومہ شامل ہیں۔ ثریا بجیا10 فروری 2016ء کو 85 سال کی عمر میں کراچی میں انتقال کر گئیں۔