توہین عدالت: دانیال عزیز کو وکیل مقرر کرنے کیلئے 10 دن کی مہلت

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے دانیال عزیزکو توہین عدالت ازخود نوٹس کیس میں وکیل مقرر کرنے کے لیے 10 دن کی مہلت دے دی۔

جسٹس عظمت سعید شیخ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کا 3 رکنی بنچ توہین عدالت ازخود نوٹس کیس کی سماعت کرے گا۔
سماعت کے دوران جسٹس عظمت سعید نے کہا کہ کياوکيل کرناچاہيں گے،مہلت ديں؟ جس پر دانیال عزیز نے کہا کہ جیسے عدالت مناسب سمجھے۔

ساتھ ہی انہوں نے عدالت کے روبرو موقف اختیار کیا کہ نوٹس میں نہیں بتایا گیا کہ کس وجہ سے جاری کیا گیا۔

جس پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ آپ کو سب کچھ پتہ لگ جائے گا، کچھ بھی غیر مناسب نہیں۔

سماعت کے بعد عدالت عظمیٰ نے وزیر نجکاری کو 10 دن کی مہلت دے دی اور اٹارنی جنرل آف پاکستان کو بھی نوٹس جاری کرتے ہوئے کیس کی سماعت 19 فروری تک کے لیے ملتوی کردی۔

واضح رہے چیف جسٹس پاکستان نے ٹی وی ٹاک شوز کے دوران عدلیہ سےمتعلق بیانات پردانیال عزیز کیخلاف ازخودنوٹس لیاتھا۔

دانیال عزیز سے قبل سپریم کورٹ نے وزیر مملکت برائے داخلہ طلال چوہدری کو بھی توہین عدالت کا نوٹس جاری کیا تھا۔

گزشتہ روز سماعت کے دوران عدالت عظمیٰ نے طلال چودھری کو توہین عدالت کا شوکاز نوٹس جاری کرتے ہوئے وکیل مقرر کرنے کے لیے مانگی گئی 3 ہفتے کی مہلت کے جواب میں ایک ہفتے کی مہلت دی اور کیس کی سماعت 13 فروری تک کے لیے ملتوی کردی۔

سماعت سے قبل دانیال عزیز نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ساری زندگی عدلیہ کی آزادی کےلیےکشمکش میں گزری ہے،184کےتحت ہماری پیشی ہے،جاکردیکھیں گےکیاہوتاہے۔ مجھے تو پتہ بھی نہیں ہے ، کس نے بلایا، آج پتہ چلے گا، کیس میں جو بھی پیشرفت ہوگی آپ سب کو آگاہ کریں گے۔