قندیل بلوچ قتل کیس :پولی گرافک ٹیسٹ کی رپورٹ میں بڑےانکشافات کاامکان

ملتان:قندیل بلوچ کیس میں نامزد ملزم مفتی عبدالقوی پولی گرافک ٹیسٹ کےبعدملتان واپس پہنچ گئے ہیں۔

زرائع کا کہنا ہے کہ پولی گرافک ٹیسٹ کی رپورٹ میں بڑےانکشافات کاامکان ہے۔

زرائع نے مزید بتایا ہے کہ مفتی عبدالقوی6گھنٹےپنجاب سائنس فرانزک ایجنسی لاہورمیں شامل تفتیش رہے اورمفتی عبدالقوی کوآج صبح6بجےپولی گرافک ٹیسٹ کےلئےلےجایاگیاتھا۔

زرائع کے مطابق دوران تفتیش مفتی عبدالقوی سے  قندیل بلوچ سے ہونے والی ملاقات کےدوران گفتگوکےبارےمیں سوالات کیےگئے اورقتل سےقبل اوربعدمیں اہلخانہ،رشتہ داروں سےرابطےسےمتعلق  بھی سوالات بھی پوچھےگئے اس کے علاوہ ملاقات میں موجودتیسرےشخص کی موجودگی کےبارےمیں بھی مفتی قوی سے سوالات کیےگئے۔

واضع رہے کہ  گزشتہ برس  جولائی میں ماڈل قندیل بلوچ کو ان کے بھائی  وسیم  نے مبینہ طور غیرت کے نام پر قتل کر دیا تھا جبکہ مقدمہ میں مقتولہ کا  کزن حق نواز بھی شامل تھا اور یہ یہ دونوں اس وقت ملتان جیل میں ہیں۔

مفتی عبدالقوی، قندیل بلوچ کے ہمراہ اس وقت منظرعام پر آئے جب گزشتہ سال رمضان المبارک کے دوران ماڈل نے چند سیلفیز اور ویڈیو سوشل میڈیا پر شیئر کی جس پر مختلف حلقوں کی جانب سے انہیں شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑا۔

ملتان کی مقامی عدالت نے قندیل بلوچ قتل کیس میں مفتی عبدالقوی کو 4 روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر رکھا ہے۔