والدہ اوربیوی سےملاقات کرانےپرپاکستانی عوام اورحکام کاشکرگزارہوں : کلبھوشن 

اسلام آباد : بھارتی خفیہ ایجنسی را کے جاسوس کلبھوشن یادیوکی والدہ اوراہلیہ سےدفتر خارجہ میں ملاقات ختم ہو گئی ہے ۔

ملاقات کے بعد بھارتی دہشت گردکلبھوشن  نے پاکستانی دفترخارجہ کاشکریہ اداکرتے ہوئے کہا کہ والدہ اوربیوی سےملاقات کرانےپرپاکستانی عوام اورحکام کاشکرگزارہوں پاکستانی حکام سےملاقات کی درخواست کی تھی درخواست قبول کرنےپرپاکستانی حکام کاشکرگزارہوں۔

کلبھوشن یادیو نے مزید کہا کہ 2سال پہلےبارڈرپارکرکےایران سےپاکستان میں داخل ہوا بھارتی خفیہ ایجنسی راکےلیےکام کررہاتھا ۔ پاکستانی حکام مجھ سےعزت سے پیش آئےانسانی ہمدردی کی بنیادپرملاقات کی درخواست کی تھی ۔

 ترجمان دفتر خار جہ  ڈاکٹر محمد فیصل  کے مطابق دفتر خارجہ کے اولڈ بلاکس میں جاسوس کلبھوشن سے ان کے اہلخانہ کی ملاقات مخصوص کمرے میں کرائی گئی جہاں شیشے کے ایک طرف جاسوس کلبھوشن اور دوسری طرف اس کی والدہ اور اہلیہ موجود تھیں۔

کلبھوشن اور ان کے  اہلخانہ کی بات چیت انٹرکوم کے ذریعے کروائی گئی جس کی ریکارڈنگ بھی کی گئی جب کہ ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ ملاقات تقریباً 40 منٹ تک جاری رہی۔

ملاقات  سے قبل کلبھوشن یادیوکی والدہ آونتی سودھیر اور بیوی چیتنا یادیواوراہلیہ کوسخت سیکیورٹی حصارمیں دفترخارجہ پہنچادیاگیا تھا ۔ ملاقات کے دوران بھارتی ڈپٹی ہائی کمشنر جے پی سنگھ اور دفتر خارجہ کی ڈائریکٹر انڈیا ڈیسک ڈاکٹر فاریحہ بھی موجود تھیں ۔

اس موقع پر ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل نے کہا کہ ہم اپنےوعدوں کی پاسداری کرتےہیں کلبھوشن سے بیوی اور والدہ کی ملاقات کی اجازت یوم قائداعظم پر انسانیت کے ناطے دی، کلبھوشن سے ملاقات کے بعد اہل خانہ آج ہی واپس براستہ عمان بھارت روانہ ہوجائیں گے۔

نمائندہ نیوز ون کے مطابق کلبھوشن کےاہلخانہ بھارتی ڈپٹی ہائی کمشنرجے پی سنگھ کے ہمراہ  پروازای کے612سےاسلام آباد پہنچے۔ دونوں خواتین ملاقات کےبعدعمان ایئرلائن کی پرواز346سےمسقط جائیں گی جس کے بعد کلبھوشن یادیواہلخانہ مسقط سےایئرانڈیاکی پرواز974سےواپس دہلی پہنچیں گی۔

خیال رہے کہ کلبھوشن یادیوسےوالدہ اوربیوی کی ملاقات دفترخارجہ میں ہوگی جہاں سخت سیکیورٹی میں کلبھوشن کےاہلخانہ کودفترخارجہ پہنچایاجائےگا اوردفترخارجہ کےباہر بھی سیکیورٹی کے سخت انتظامات کی گئے ہیں ۔

زرائع کے مطابق  بھارت نے  پاکستان سے جاسوس کلبھوشن کی ملاقات کی میڈیا کوریج نہ کرنے کی درخواست کی تھی جبکہ پاکستان  کی جانب سے بھارتی صحافیوں کوکوریج کر نے کے لیے مفت ویزے جاری کر نے کی پیشکش بھی کی گئی تھی  لیکن بھارت نےحقیقت چھپانےکےلیےاپنےمیڈیاکوپاکستان آنے کی اجازت نہیں دی ۔

واضح رہے کہ بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیوکو3مارچ2016کوگرفتارکیاگیاتھا۔

مجسٹریٹ کےسامنے بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو نے اعترافی بیان دیاتھا جس میں کلبھوشن یادیونےپاکستان میں دہشت گردکارروائیاں کرنےکااعتراف کیا اور بتایا کہ وہ پاکستان میں جاسوسی کررہا تھا  اور اس نےحسین مبارک پٹیل کےنام سے پاسپورٹ بنارکھاتھا ۔ کلبھوشن یادیوایران کےراستےپاکستان میں داخل ہواتھا ۔