ہم امت مسلمہ کے اندرونی خلفشار میں فریق نہیں بنناچاہتے: وزیر خارجہ

KHAWAJA ASIF

اسلام آباد:وزیرخارجہ خواجہ آصف نے  قومی اسمبلی میں پالیسی بیان میں کہا ہے کہ ہم امت مسلمہ کے اندرونی خلفشار میں فریق نہیں بنناچاہتے۔

 مسلم امہ کودرپیش مسائل کےحوالےسےبحث سمیٹ رہے ہیںموجودہ حالات میں کسی کو مورد الزام نہیں ٹھہراناچاہیے،کسی کومورد الزام ٹھہرانےکےبجائےاپنےگریبان میں جھانکناچاہیے۔

خواجہ آصف نے کہا کہ شام میں جوکچھ ہورہاہےاس پر تحفظات ہیں، پیرکوبتاؤں گااقوام متحدہ میں شام کےلیےووٹ کیوں نہیں ڈالا،جوبھی اس واقعےمیں ذمہ دار ہوگااس کا مواخزہ ہوگا۔

وزیرخارجہ نے کہا ہے کہ دنیامیں اپنا مقام مسلمانوں کی فلاح کےلیےاستعمال کرنا چاہیے، ساری مسلم امہ پاکستان کی طرف دیکھ رہی ہے،ماضی میں جہاد کےنام پر امریکا کی جنگ لڑی گئی ۔

خواجہ آصف  کا کہناتھا کہ بڑاظلم ہواامریکانےاپناسفارتخانہ بیت المقدس میں منتقل کیا، دشمن سمندرپارسےآکرخون کی ہولی نہیں کھیل سکتا، جب تک ہم خود سہولت کارنہ ہوں ۔

انھوں نے کہا کہ حالات سےسبق نہ سیکھاتوبہت برےحالات پیش آئیں گے،ہم ماضی کی غلطیوں کا ملبہ صاف کررہے ہیں،ماضی میں حکمرانوں نےذاتی مفاد کےلیےملکی مستقبل داؤ پرلگایا۔

خواجہ آصف  نے کہاکہ ہم امت مسلمہ کے اندرونی خلفشار میں فریق نہیں بنناچاہتے،دشمن کو جانتے ہیں لیکن سہولت کاروں کو پہچاننا ہوگا، داعش نے پتہ تبدیل کردیا ہے،عراق سےافغانستان آگئی ہے۔

ایل او سی پرجوکچھ ہورہا ہے بخوبی آگاہ ہیں پاکستان نے یمن کی جنگ میں شرکت نہیں کی،دنیامیں اپنامقام مسلمانوں کی فلاح کےلیےاستعمال کرناچاہتے ہیں،افغانستان میں امن پاکستانیوں اورافغانیوں کی مشترکہ خواہش ہے ۔

انھوں نے ایل او سی کے حوالے سے کہا کہ ،ایل او سی،ورکنگ باؤنڈری پرصورتحال ابترہورہی ہے،رواں سال کےآغازسےاب تک سیزفائرکی400سےزائدخلاف ورزیاں کی گئیں،رواں سال بھارتی فائرنگ سے18پاکستانی شہری شہیدہوئے،فائرنگ سے گزشتہ سال54پاکستانی شہید،174 زخمی ہوئے ۔

امریکی صدر کے  منفی بیان پر امریکا کوبتادیا یہ زبان ناقابل قبول ہے : وزاتِ خارجہ

 وزیر خارجہ  خواجہ آصف نے قومی  اسمبلی  میں  جمع کرائے  گئے  اپنے بیان میں  کہا ہےکہ امریکی صدرنےیکم جنوری کوپاکستان کےبارے میں منفی ٹوئٹ کیا،امریکی عہدیداروں کےساتھ ڈونلڈٹرمپ کےبیان کامعاملہ اٹھایاگیا ۔

وزیر خارجہ نے کہاکہ امریکی  صدر کے کے منفی بیان پر  امریکاکوبتایا گیایہ زبان ناقابل قبول ہے ۔

خواجہ آصف  نے کہا کہ امریکاکوبتایا دہشت گردی کیخلاف جنگ میں کتنی قربانیاں دی ہیں،پاکستان بےبنیادالزامات کےباوجودخطےمیں استحکام کےلیےکوشاں ہے پاکستان اپنےدفاع اورسالمیت کےلیےبھی تیارہے۔

واضح رہے کہ اسپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق کی سربراہی میں قومی اسمبلی کا اجلاس ہوا جس میں وقفہ سوالات کے دوران وزارت خارجہ نے تحریری جواب ایوان میں پیش کیا۔