تحریک انصاف کا حکومت کی ایمنسٹی اسکیم عدالت میں چیلنج کرنے کا فیصلہ

لاہور: حکومت کی جانب سے اعلان کردہ ایمنسٹی اسکیم کو تحریک انصاف نے عدالت میں چیلنج کرنے کا فیصلہ کرلیا۔

تفصیلات مطابق پاکستان تحریک انصاف نے پاکستانیوں اور اوورسیز پاکستانیوں کے لیے کالا دھن سفید کرنے کے لیے حکومت کی 5 نکاتی ٹیکس ایمنسٹی اسکیم مسترد کردی ہے۔جس کے بعد پارٹی نے اس سلسلے میں عدالت سے رجوع کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے اپنے ٹویٹ میں کہا تحریک انصاف نے بخشش کی ایک اور حکومتی منصوبہ بندی مسترد کر دی، ایمنسٹی اسکیم مجرموں کو بچانے کی ایک اور کوشش ہے۔ انہوں نے کہا وزیراعظم مدت پوری ہونے سے 45 روز پہلے ایسا کیوں کرنا چاہتےہیں ؟ حکومت نے بجٹ سے 2 ہفتے پہلے ایسا کیوں کیا ؟۔ ان کا کہنا تھا ایمنسٹی اسکیم ایماندار ٹیکس دہندگان کے منہ پر طمانچہ ہے۔

پی ٹی آئی کے رہنما اسد عمر نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ کل چیئرمین قائمہ کمیٹی کوبھی ایمنسٹی اسکیم کامعلوم نہیں تھا، ایمنسٹی اسکیم کالا دھن سفید کرنے کے لیے ہے،ایمنسٹی اسکیم دیانتدارلوگوں کےمنہ پرتھپڑ ہے۔

اسد عمر نے کہا کہ منی لانڈرنگ،کرپشن کرنیوالاذاتی اکاؤنٹ سےکچھ نہیں کرتا،ابھی تک آرڈیننس کاڈرافٹ بھی کسی کےپاس نہیں،پارلیمنٹ،کابینہ اورمیڈیاسےچھپ کریہ کام کیا گیا۔

پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ پرانی اسکیم کی طرح اب بھی لوگوں کاکالا دھن سفیدہوگا،پانامالیکس میں جس جس کانام تھاوہ اس سےفائدہ نہیں اٹھاسکتے۔

دوسری جانب تحریک انصاف کے مرکزی ترجمان فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ منی لانڈرنگ کرنے والے حکمران اپنے جیسوں کو نواز رہے ہیں، یہ اسکیم نہیں بلکہ ملک لوٹنے والوں کو فری ہینڈ دینے کا انعام ہے، ایمنسٹی اسکیم کا معاملہ سینیٹ میں بھی بھرپور انداز سے اٹھایا جائے گا اور سینیٹ میں ایمنسٹی اسکیم کے خلاف قرارداد بھی لائے جائے گی۔

واضح رہے کہ وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے ٹیکس ناد ہندگان کے لیے ایمنسٹی اسکیم کا اعلان کیا تھا۔

مزید پڑھیے : وزیراعظم نے ٹیکس ناد ہندگان کے لیے ایمنسٹی اسکیم کا اعلان کردیا

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ملک میں اس وقت صرف 7 لاکھ افراد انکم ٹیکس ادا کرتے ہیں، ٹیکس دہندہ گان کی محدود تعداد معاشی مسائل پیدا کر رہی ہے اور ٹیکس ادا نہ کرنے سے قومی خزانے پر اضافی بوجھ پڑتا ہے، تاہم مذکورہ پیکج سے انکم ٹیکس کے دائرہ کار میں اضافہ ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ ’ملک میں 12 کروڑ افراد قومی شناختی کارڈ رکھتے ہیں، شناختی کارڈ نمبر کو انکم ٹیکس نمبر بنادیا گیا ہے اور اس پیکج کے ذریعے کوئی بھی شہری ایک آسان فارم بھر کر انکم ٹیکس دہندہ بن سکتا ہے۔

وزیراعظم نے 5 نکاتی ٹیکس اصلاحات کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ ’جو لوگ ٹیکس ادا نہیں کرتے اور جن کے بیرون ملک اثاثے موجود ہیں وہ 2 فیصد جرمانہ ادا کر کے ٹیکس ایمنسٹی حاصل کر سکتے ہیں۔‘