مجھے ڈونلڈ ٹرمپ کے لیے کام کرنے پر ہوٹل سے نکلنے کا کہا گیا : سارہ سینڈر

امریکی وزارت خارجہ کی ترجمان سارہ سینڈر کا کہنا ہے کہ مجھے ڈونلڈ ٹرمپ کے لیے کام کرنے پر ہوٹل سے نکلنے کا کہا گیا ۔

تفصیلات کے مطابق امریکی خاتون ترجمان کے ساتھ یہ واقع گزشتہ رات پیش آیا جب وہ اپنی فیملی کے ساتھ رات کا کھانا کھانے کیلئے ورجینیا میں واقع ایک ریسٹورنٹ پہنچیں ۔

ریسٹورنٹ کی مالک نے انتہائی تلخ لہجے میں پھر کہا کہ یہاں سے فوراً نکلو،اس واقعے کو سارہ سینڈر نے خود بھی اپنے ٹوئٹرپیغام میں بتایا ہے کہ مجھے ڈونلڈ ٹرمپ کے لیے کام کرنے پر ہوٹل سے نکلنے کا کہا گیا تو میں خاموشی سے باہر نکل آئی۔

ریڈ ہین نامی ریسٹورنٹ کی مالک ولکنسن نے کہا ہے کہ میں سمجھتی ہوں کہ سارہ سینڈر انسانیت کے لئے کام نہیں کرتیں بلکہ ٹرمپ جیسے ظالم شخص کےلئے کام کرتی ہیں ۔

دودری جانب امریکی وزارت خارجہ کی خاتون ترجمان کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ وہ دھیمے انداز میں اور خوش اخلاقی سے دوسروں کے ساتھ پیش آتی ہیں خواہ وہ سخت مخالف ہی کیوں نہ ہو،بہر حال وہ دوسروں کے ساتھ خوش اخلاقی کے ساتھ پیش آتی رہیں گی ۔

خیال رہے کہ ریسٹورینٹ میں بکنگ ان کے شوہر کے نام سے ہوئی تھی،ترجمان خاتون جب اپنی فیملی کے ساتھ ریسٹورنٹ کی ٹیبل پر جا کر بیٹھیں تو ریسٹورنٹ کی خاتون مالک اسٹیفنی ولکنسن نے سارہ سینڈر سے کہا آپ ڈونلڈ ٹرمپ کیلئے کام کرتی ہیں اس لئے بہتر ہوگا کہ آپ ریسٹورنٹ سے فوری طور پر چلی جائیں۔