خبردار! فضائی آلودگی آپ کو کند ذہن بھی بناسکتی ہے

نیویارک : فضائی آلودگی کے جسمانی نقصانات تو واضح تھے لیکن اب معلوم ہوا ہے کہ زہریلے ذرات سے بھری ہوا میں سانس لینے سے انسانی ذہانت میں بھی کمی واقع ہوسکتی ہے۔

 تفصیلات کے مطابق چین میں کی گئی ایک تحقیق سے انکشاف ہوا ہے کہ  آلودہ فضاانسانی ذہن پر بھی اثرانداز ہوتی جس کے  منفی اثرات عمر کے ساتھ ساتھ بڑھتے ہیں اور اس سے سب سے زیادہ متاثر وہ افراد ہوتے ہیں جو کم تعلیم یافتہ ہوتے ہیں۔

امریکہ میں ییل اسکول آف پبلک ہیلتھ کے ماہر ژائی چین اور ان کے ساتھیوں کی اس تحقیق سے یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ غیرمحفوظ فضاء طالب علموں میں زبان سیکھنے اور ریاضی کی صلاحیتوں کو شدید متاثر کررہی ہیں۔

اس تحقیق سے عمررسیدہ افراد اور کم تعلیم یافتہ افراد زیادہ متاثر ہوتے ہیں جبکہ  آلودگی سے الزائمر اور دوسری طرح کے ڈیمینیشیا جیسے امراض کا بھی خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

عالمی ادارہ صحت کے مطابق نہ دکھنے والے قاتل ذرات یعنی فضائی آلودگی کے باعث ایک اندازے کے مطابق سالانہ 70 لاکھ قبل از وقت اموات ہوتی ہیں۔