اپوزیشن جماعتیں حلف کا بائیکاٹ نہیں کریں گی، شیری رحمان

اسلام آباد: پاکستان پیپلز پارٹی کی رہنما شیری رحمان کا کہنا ہے کہ اپوزیشن جماعتیں حلف کا بائیکاٹ نہیں کریں گی۔

پاکستان پیپلز پارٹی کی رہنما شیری رحمان کا آل پارٹیز کانفرنس کے بعد اپوزیشن رہنماؤں لیاقت بلوچ، احسن اقبال اور عبد الغفور حیدری کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ پاکستان میں غیر منصفانہ انتخابات ہوئے ہیں لیکن اپوزیشن جماعتیں حلف کابائیکاٹ نہیں کریں گی۔

شیری رحمان کا کہنا تھا کہ ایوان میں جانے کا متفقہ فیصلہ کیا ہے اور ایوان کے اندر اور باہر بھرپور احتجاج کریں گے۔ کٹھ پتلی حکومت کا مقابلہ کریں گے اور اپوزیشن اتحاد جعلی الیکشن کو مسترد کرتا ہے۔

پاکستان پیپلز پارٹی کی رہنما شیری رحمان کا کہنا تھا کہ سب کے اپنے اپنے منشور ہیں، جنہیں برقرار رکھیں گے جبکہ اسپیکر قومی اسمبلی کا امیدوار پیپلزپارٹی سے ہوگا، ڈپٹی اسپیکر متحدہ مجلس عمل لائے گی اور وزیر اعظم کا امیدوار مسلم لیگ ن سے ہوگا۔

شیری رحمان کا کہنا تھا کہ اجلاس میں فیصلہ کیا ہے کہ قومی اسمبلی میں مشترکہ امیدوار لایا جائے گا۔ انہوں نے عام انتخابات 2018 پر اعتراض اٹھاتے ہوئے کہا کہ الیکشن میں مداخلت کرکے ایک جماعت کو فائدہ پہنچایا گیا۔

سینیٹ میں قائد حزب اختلاف شیری رحمان کا کہنا تھا کہ مضبوط جمہوری اپوزیشن کا کردار ادا کریں گےاور اس کے لیے ٹی اوآر طے کریں گے ۔ الیکشن کے نتائج کو جمع کرنے والے آر ٹی ایس سسٹم کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ مذکورہ سسٹم بند نہیں ہوا ہے اس کو بند کرایا گیا ہے۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے متحدہ مجلس عمل کے رہنما لیاقت بلوچ کا کہنا تھا کہ آئین اور جمہوریت کا تحفظ کریں گے اور شفاف انتخابات کے لیے جدوجہد جاری رکھیں گے۔

سابق وزیرداخلہ احسن اقبال کا میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ مل کر جدوجہد کا فیصلہ کیا ہے اور کٹھ پتلی اتحاد کو شکست دینے کی بھرپورکوشش کریں  گے۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن میں بےقاعدگیوں سے پاکستان کی بنیاد پر حملہ کیا گیا ہے ۔ اپوزیشن میں بھرپور اپنا کردار ادا کریں گے۔

متحدہ مجلس عمل کے رہنما عبدالغفور حیدری کا کہنا تھا کہ اتحاد کو متحد رکھنے کے لیے اپنی رائے کی قربانی دی ہے اور متحد ہو کر لڑیں گے اورجیت کر دکھائیں گے انھوں نے کہا کہ فیصلہ کیا ہے ایوان میں جاکر مقابلہ کریں گے۔